گھونگوں سے متعلق دلچسپ معلومات

گھونگوں(Snails) کا شمار دنیا بھرمیں پائے جانے والے سست ترین جانوروں میں ہوتا ہے۔ ان کا ایک ہی پاؤں ہوتا ہے جس کی مدد سے یہ 0.5 سے 0.8 انچ فی سیکنڈ کی رفتار سے چلتے ہیں۔ اگر یہ رکے بغیر چلتے رہیں توایک ہفتے میں ایک کلومیٹر کا سفر طے کرسکتے ہیں۔

گھونگوں کا سائز اور اقسام

٭ان کے مختلف رنگ اورسائز ہوتے ہیں۔ عموماً یہ ہلکے بادامی یا سرمئی رنگ کے اور سائز میں کچھ سنٹی میٹرسے لے کر تقریباً 12 انچ تک ہوسکتے ہیں۔

٭گھونگوں کی دو اقسام ہیں جن میں سے ایک زمین پر جبکہ دوسری پانی میں رہتی ہے۔ زمین پررہنے والے گھونگے اپنے ایک پھیپھڑے کے ذریعے سانس لیتے ہیں جبکہ پانی میں رہنے والی قسم اس مقصد کے لئے خاص اعضاء(Gills) استعمال کرتی ہے۔

٭بعض مسلم علماء کے نزدیک خشکی پررہنے والے گھونگوں کو کھانا حرام جبکہ سمندری گھونگے کھانا حلال ہے۔

٭ایک ہی گھونگے میں نر اور مادہ دونوں تولیدی اعضاء ہوتے ہیں۔

٭یہ 100 انڈے دیتے ہیں۔ 20 سے 50 تک میں سے بچے نکلتے ہیں۔

٭ان کے چھوٹے سے جبڑے میں 20 ہزارتک دانت موجود ہوتے ہیں۔

٭یہ سبز اور خشک پتوں سے لے کردیگر گھونگوں کے خالی خول تک مختلف طرح کی چیزیں کھا لیتے ہیں۔

٭ دنیا کے سب سے چھوٹے گھونگے(Angustopila Psammion)کاقد 0.48 ملی میٹر جبکہ حجم 0.036کیوبک ملی میٹر ہے۔ یہ اتنا چھوٹا ہے کہ سوئی میں دھاگہ ڈالنے والی جگہ سے باآسانی گزر سکتا ہے۔

گھونگوں کی زندگی

٭ یہ اپنے خول سمیت پیدا ہوتے ہیں جو ان کے ساتھ ساتھ نشوونما پاتا ہے۔ شروع میں یہ شفاف اور سائزمیں چھوٹا ہوتا ہے۔ پھر ان کی خوراک میں موجود کیلشیم اس کا سائز بڑھاتا اور اسے سخت کرتا ہے۔

٭ انہیں زندہ رہنے کے لئے مسلسل نمی درکار ہوتی ہے۔ یہ خشک اور سر د موسم میں زندہ رہنے کے لئے خود کو جسم سے خارج ہونے والی رطوبت سے ڈھانپ لیتے ہیں۔

٭ گھونگے کا خول اس کے جسم اور اعضاء کی حفاظت کرتا ہے۔ اگرخول کو تھوڑا بہت نقصان پہنچ جائے تو اسے مسئلہ نہیں ہوتا لیکن یہ مکمل ٹوٹ جائے یااسے خول سے نکال دیا جائے تو یہ زندہ نہیں رہ سکتا۔

٭ان پرنمک چھڑکا جائے تویہ ان کے جسم سے نکلنے والی رطوبت سے مل کرجسم سے پانی کو جذب کرلیتا ہے۔ نتیجتاً پانی کی کمی کے باعث ان کی موت ہوجاتی ہے۔

٭ خطرے کی صورت میں یہ اپنے خول کو حفاظتی ڈھال کی طرح استعمال کرتے ہوئے اس میں چھپ جاتے ہیں۔

٭جیسے درختوں کو دیکھ کر ان کی عمر کا اندازہ ہوجاتا ہے اسی طرح ان کے خول پر موجود لائنیں بھی ان کی عمر کوظاہر کرتی ہیں۔

٭یہ عموماً دو سے تین  سال زندہ رہتے ہیں تاہم ان کی مناسب دیکھ بھال کی جائے تو10 سال تک زندہ رہ سکتے ہیں۔

٭ گھونگے ہر 30 گھنٹے بعد 13گھنٹوں کے لئے وقفے وقفے سے سات مرتبہ سوتے ہیں۔

گھونگوں سے کیا فائدے لیے جاسکتے ہیں

٭ان کا خول کیلشیم کا بہترین ذریعہ ہے۔ اس کے پاؤڈر کوتعمیراتی کاموں، مٹی کے برتنوں اورکاغذ کی تیاری وغیرہ میں استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ انہیں مضبوط کرتا اورعمارت کو بارش کے اثرات سے محفوظ رکھتا ہے۔

٭زمانہ قدیم میں گھونگوں کو پیٹ درد، یرقان(Jaundice) اورٹی بی کے علاج کے لئے تجویزکیا جاتا تھا۔ ان کی رطوبت میں زخمی جلد کو ٹھیک کرنے اورسوزش کم کرنے کی خصوصیات ہوتی ہیں۔

٭ان کی رطوبت سے بننے والا پاؤڈر ایکنی ،جھریوں اور جلد کے دیگر مسائل کو ٹھیک کرنے میں مفید ثابت ہوتا ہے۔

interesting facts about snails, smallest snail in the world, snail shell, do snails die if you put salt on them

Vinkmag ad

Read Previous

کچھ لوگ موڈی کیوں ہوتے ہیں؟

Read Next

 کیا ماہواری کے دوران نہانا ٹھیک ہے؟

Leave a Reply

Most Popular