Vinkmag ad

بلندی پر کان میں درد کیوں ہوتا ہے

بلندی پر کان میں درد کیوں ہوتا ہے

ہوائی جہاز کا سفرہو یا اونچائی پر سیرو تفریخ کے لئے نکلیں اوراچانک کانوں میں شدید تکلیف شروع ہو جائے یا کان بھرے بھرے محسوس ہوں تو سفر کا مزہ کرکرا ہو جاتا ہے۔ اگر آپ یا آپ کے کسی عزیز کے ساتھ ایسا ہو تو یقیناً یہ سوال آپ کے ذہن میں بھی آئے گاکہ ایسا کیوں ہوتا ہے۔ آج ہم اسی پر بات کریں گے۔

شاید آپ اس بات سے آگاہ ہوں گے کہ زمین کی سطح پر ہوا کا دبائو اونچائی کے مقابلے میں زیادہ ہوتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یہاں ہوا کے مالیکیولوں کے درمیان فاصلہ کم ہوتا ہے یعنی وہ گھنے ہوتے ہیں۔ جوں جوں ہم بلندی کی طرف جاتے ہیں توان میں فاصلہ بڑھتا ہے یعنی مالیکیول پتلے یا کم گھنے ہو جاتے ہیں۔ نتیجتاً یہ دبائو کم ہوتا چلا جاتا ہے۔

جہاں تک ہماری سماعتوں سے اس معاملے کا تعلق ہے تو اس کی تفصیل کچھ یوں ہے۔ یوسٹاشین نامی ایک نالی کان کے درمیانی حصے کو ناک اور گلے سے جوڑتی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ یہ کان کے پردے کے دونوں طرف ہوا کے دبائو میں توازن کو بھی قائم رکھتی ہے۔ چونکہ اونچائی پر ہوا کا دبائو کم ہوجاتا ہے لہٰذا کان کے پردوں پر یہ دبائو بڑھ جاتا ہے۔ اس سے یوسٹاشین نالی بند ہو جاتی ہے‘ کان بھرے بھرے سے محسوس ہوتے ہیں اور بعض اوقات ان میں درد بھی ہوتا ہے۔

بلندی پر جاتے ہوئے اگر شدید نزلہ زکام ہو تو یہ نالی سوج بھی جاتی ہے۔ ایسے میں بندناک کھولنے والے قطروں کا استعمال اور بھاپ لینا فائدہ مند ثابت ہو سکتا ہے۔ کچھ دیر کے لئے اونگھ لینے یا ٹافی چوسنے سے اس نالی کو کھلنے میں مدد ملتی ہے اورپردے کے دونوں طرف دبائو برابر ہو جاتا ہے۔

eustachian tube, ear pain, high altitude

Vinkmag ad

Read Previous

بچوں کے حفاظتی ٹیکے  

Read Next

ننھے دلوں کے مسائل

Leave a Reply

Most Popular