Vinkmag ad

سینیٹ میں وفاقی وزارت صحت ختم کرنے کی سفارش

سینیٹ میں وفاقی وزارت صحت ختم کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔ تجویز سینیٹ کی فنکشنل کمیٹی برائے ڈیوولوشن کی چیئرپرسن سینیٹر زرقا سہروردی تیمور نے پیش کی۔ انہوں نے وفاق میں صحت اور تعلیم کی وزارتوں کو آئین کی خلاف ورزی قرار دیا۔ ان کے بقول 18 ویں ترمیم کے بعد یہ وزارتیں صوبوں کے دائرہ کار میں آتی ہیں۔

اجلاس میں سینیٹر زرقا، سینیٹر ضمیر حسین گھمرو، سینیٹر پونجو بھیل، وزیراعظم کے کوآرڈینیٹر برائے نیشنل ہیلتھ سروسز ڈاکٹر ملک مختار احمد بھرتھ، سیکرٹری ہیلتھ ندیم محبوب، چیئرمین ایچ ای سی مختار احمد اور دیگر اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔

وفاقی سیکرٹری صحت نے اجلاس کو بتایا کہ 18 ویں ترمیم کے بعد 2010 میں وفاقی وزارت صحت ختم کر دی گئی۔ تاہم 2013 میں اسے دوبارہ قائم کیا گیا۔ اس کا مقصد صحت کے معاملات پر صوبوں اور وفاقی حکومت کے درمیان ہم آہنگی پیدا کرنا تھا۔ علاوہ ازیں امیونائزیشن پروگراموں میں صوبوں کو تعاون فراہم کرنا بھی اس کا مقصد تھا۔ سینیٹر ضمیر حسین گھمرو نے ان بنیادوں کو کمزور دیا۔ انہوں نے کہا کہ رابطہ کاری کو مشترکہ مفادات کونسل کے ذریعے بھی بڑھایا جا سکتا ہے۔

سیکرٹری صحت نے بتایا کہ اس وقت 32 محکمے وزارت کے دائرہ اختیار میں آتے ہیں۔ ان میں پمز، پی ایم ڈی سی، این آئی ایچ اور صحت سہولت پروگرام شامل ہیں۔

ڈاکٹر مختار بھرتھ نے بتایا کہ وزیر اعظم نے وزارت کو اختیارات کی نچلی سطح تک منتقلی کا کام سونپا ہے۔ اس سلسلے میں کوششیں جاری ہیں۔

Vinkmag ad

Read Previous

 ایک ہفتے میں کتوں کے کاٹے کے 5000 سے زائد واقعات

Read Next

پاکستان میں 40,000 رجسٹرڈ ڈاکٹر پریکٹس نہیں کرتے

Leave a Reply

Most Popular