کرنٹ: ابتدائی طبی امداد

کرنٹ: ابتدائی طبی امداد

الیکٹرک کرنٹ سے متاثرہ شخص کی مدد کرنا بعض اوقات خطرناک ثابت ہوتا ہے۔ اگر احتیاط نہ برتی جائے توایک کے بجائے دونوں افراد کرنٹ کی زد میں آجاتے ہیں۔

کیا کریں، کیا نہیں

کرنٹ سے متاثرہ فرد کی مدد سے قبل ان باتوں کو ذہن میں رکھیں

٭بجلی کی سپلا ئی لائن بند کردیں۔

٭جلد بازی میں مریض کو بازو یا ہاتھ سے پکڑ کر بچانے کی کوشش نہ کریں۔ اسے خشک لکڑی، سوتی کپڑے یا کمبل وغیرہ کی مدد سے الگ کریں۔

٭ننگے پاؤں مریض کو نہ چھوئیں۔ پلاسٹک کے چپل پہن کریا کسی لکڑی کے تختے پرکھڑے ہو کر اسے الگ کرنے کی کو شش کریں۔

٭اس بات کی بھی تسلی کرلیں کہ فرش وغیرہ گیلا نہ ہو۔

٭متاثرہ شخص کوکرنٹ والی چیز سے الگ کریں تو اسے سہار ا دے کرزمین پرلٹا دیں۔ اس دوران مریض کو زیادہ ہلانے کی ضرورت نہیں بلکہ اسے ایک ہی جگہ رکھیں۔

٭اگر مریض کی سانس بند ہو گئی ہوتو اسے مصنوعی سانس دینے کی کوشش کریں۔

٭مریض کے جسم کا کوئی حصہ کرنٹ کے باعث جل جائے تو اس جگہ سے کپڑا ہٹا دیں اورکسی صاف کپڑے سے پٹی کردیں۔

٭کرنٹ سے جلے حصے پربرف یا مرہم وغیرہ نہ لگائیں۔

٭ اگر کسی کو ہائی وولٹیج کے ذرائع سے کرنٹ لگا ہو تو فوری طور پراس کے پا س نہ جائیں ورنہ جسمانی ربط سے آپ بھی کرنٹ کی زد میں آسکتے ہیں۔ یہ مسئلہ عام عموماً شہروں کو بجلی فراہم کرنے والے اسٹیشن میں پیش آسکتا ہے۔ گھر میں کسی کو کرنٹ لگ جائے تواسے فوری امداد دیں۔

٭ابتدائی طبی امداد کے بعد مزید میڈ یکل کیئرکی ضرورت ہو تو فوری طورپر ایمبولینس کے لئے کال کریں۔

current, first aid in case of current emergency, do’s and don’ts of current emergency

مزید پڑھیں/ Read More

متعلقہ اشاعت/ Related Posts

LEAVE YOUR COMMENTS