• Home
  • امراض
  • خون کا سرطان: وجوہات اور علامات

خون کا سرطان: وجوہات اور علامات

4

خون کا سرطان: وجوہات اور علامات

 

علامات اور تشخیصی ٹیسٹ

کینسر کی دیگر اقسام کی طرح خون کے سرطان کی بھی ابتدائی مرحلے میں علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ جب کام کے لئے پوری طرح تیار نہ ہونے والے خلئے خون میں زیادہ تعداد شامل ہونے لگتے ہیں تو اس مرض کی علامات ظاہر ہونے لگتی ہیں جن میں سے چند یہ ہیں

 ایسی تھکاوٹ جو ہر وقت رہے۔ جسمانی کمزوری اور چھاتی میں درد بھی اس کی علامت ہوسکتی ہے۔ بخار جو سردی لگ کر بھی ہو سکتا ہے۔

 پسینہ زیادہ آنا‘ بھوک کا ختم ہونا‘ متلی  محسوس ہونا اور وزن میں کمی ہو جانا۔ سانس کا مختصر وقفے سے آنا۔ بار بار انفیکشن ہونا۔

 جلد پر خارش ہونا‘ دھبے نمودار ہونا یا جسم کے کسی حصے مثلاً مسوڑھوں اور ناک وغیرہ سے بغیر کسی وجہ کے بار بار خون نکلنا۔ بعض مریضوں کے جلد کی رنگت خون کی کمی کی وجہ سے زرد ہو جاتی ہے۔

مذکورہ بالا علامات دیگر امراض میں بھی ظاہر ہوتی ہیں لہٰذا بلڈکینسر کی تشخیص کے لئے کچھ ٹیسٹ کئے جاتے ہیں۔ ان میں سے ایک سی بی سی ہے جو ابتدائی مرحلے میں مددگار ثابت ہوتا ہے تاہم کینسر اور اس کی قسم کی حتمی تشخیص کے لئے ہڈی کے گودے  کا ٹیسٹ کیا جاتا ہے۔

مرض کی وجوہات

سرطان کی دیگر اقسام کی طرح اس کی بھی حقیقی اور حتمی وجہ کا تعین نہیں ہو سکا‘ البتہ یہ عوامل اس کینسر کے ہونے میں مددگار ثابت ہو سکتے ہیں

 اس کا ایک سبب مصنوعی شعائیں  دینا بھی ہے جس میں دیگر شعاعوں کے علاوہ کینسر میں دی جانے والی شعائیں بھی شامل ہیں۔ بالعموم شعاعیں لگنے کے 5 سے 10سال بعد خون کا کینسر ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔
 بینزین  اور کچھ دیگر کیمیکلز مادے مثلاً پیٹروکیمیکل وغیرہ بھی اس کا سبب بن سکتے ہیں۔

 خون کے مالیکیولوں میں کیموتھیراپی کے ذریعے الکائیل گروپ کی ادویات شامل کرنے کا عمل  بھی اس کا سبب بن سکتا ہے جو اس سے قبل کسی اور قسم کے کینسر کے علاج کے لئے استعمال ہوا ہو۔
 دھوئیں اور خصوصاً سگریٹ کے دھوئیں کا تعلق بلڈکینسر کے ساتھ بھی ہے۔

 

Nausea   shortness of breath complete blood count radiations   bone marrow petrochemical Benzene alkylation

 

0 0 vote
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x