دودھ کے دانت

6

نظرثانی : ڈاکٹر امتیاز احمد، ماہرامراض‌دنداں، شفاانٹرنیشنل اسلام آباد
بڑوں کی طرح چھوٹے بچوں کو بھی صحت مند دانتوں کی ضرورت ہوتی ہے ۔ان کی مدد سے وہ نہ صرف خوراک کو اچھی طرح چبا سکتے ہیں بلکہ وہ ٹھیک طرح سے بولنے میں بھی ان کی مدد کرتے ہیں ۔ پہلا دانت نکلنے کے بعد ہی اس کی صفائی ضروری ہو جاتی ہے ۔والدین کو اس پر توجہ دینے کی اشد ضرورت ہے تاکہ ان کے دانت صحت مند رہ سکیں۔

پہلا دانت نکلنے کا وقت
بچوں کاپہلادانت عموماًچھے ماہ کی عمر میں نکل آتا ہے لیکن یہ ممکن ہے کہ ایک سال کی عمر تک پہنچنے کے باوجودکچھ بچوں کا کوئی دانت نہ نکلے‘اس لئے کہ ان میںدانت نکلنے کی عمر مختلف ہوتی ہے۔ عموماً اڑھائی سال کی عمر تک بچوں کے پورے دانت نکل آتے ہیں ۔بعض اوقات پیدائش کے وقت بچے کے منہ میں ایک یا دو دانت موجود ہوتے ہیں لیکن ایسا بہت ہی کم ہوتا ہے ۔اگر وہ دانت ہل نہ رہے ہوں تو پھر کوئی مسئلہ نہیں لیکن اگر وہ ہل رہے ہوں تو انہیں نکال دیا جاتا ہے تاکہ بچہ انہیں نگل نہ لے یا اسے دودھ پینے میں کوئی دشواری نہ ہو ۔
ٹھوس چیز(Teether)کا استعمال
کچھ دانت کسی تکلیف کے بغیر نکل آتے ہیں جبکہ کچھ صورتوں میں بچوں کو مسوڑھوں میں تکلیف ہوتی ہے اور وہ سرخ ہو جاتے ہیں ۔بچے اس تکلیف سے بچنے کیلئے کوئی چیز منہ میں ڈال کر چبانے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایسے میں ان کے منہ سے رال بھی بہہ سکتی ہے۔
٭ایسے میں بچے کو کوئی ٹھوس چیز (Teethers)وغیرہ دی جا سکتی ہے ۔
٭اس بات کا خیال رکھیں کہ وہ ٹھوس چیز صاف ستھری ہو اور اسے گرم پانی سے دھو کر بچے کو منہ میں ڈالنے کے لیے دیں۔
٭مسوڑھوں کی تکلیف سے آرام کے لیے ڈاکٹر کے ہدایت کے مطابق دوا استعمال کی جا سکتی ہے۔

والدین کیا کریں
٭بچوں کے دانتوں کا معائنہ کرتے رہیں اور ان کی صفائی کا خیال رکھیں۔
٭صحت مند دانت ایک ہی رنگ کے ہوتے ہیں۔ اگر بچے کے دانت پر کوئی داغ دھبہ ہو تو ڈاکٹرکو دکھائیں۔
٭ دو سال کی عمر میں بچوں کے دانتوں پر فلورائیڈ ٹوتھ پیسٹ کا استعمال شروع کر دینا چاہیے۔ صفائی کیلئے مٹر کے دانے کے برابرٹوتھ پیسٹ کافی ہوتا ہے۔
٭بچے سات یا آٹھ سال کی عمر تک اپنے دانت خود صاف نہیں کر سکتے۔ اس لیے اس وقت تک دانت صاف کرنے میں ان کی مددکریں۔
٭بچوں کو کھانے کے لیے میٹھی چیزیں کم سے کم دیں۔
٭جوس اور دیگر مشروبات وغیرہ میں زیادہ شوگر موجود ہوتی ہے۔ اگر وہ زیادہ دیر تک دانتوں پر موجود رہے توان کی خرابی کا باعث بنتی ہے ۔اس لیے چائے‘ جوس یا شربت وغیرہ پینے کے بعد دانتوں کی صفائی ضروری ہے۔
٭رات کو سونے سے پہلے بچے کو فیڈر میں میٹھی چیزدینے سے اجتناب کریں ۔
٭ایک سال کی عمر تک پہنچنے کے بعد بچے کو فیڈر کی بجائے کپ سے پینا سکھائیں۔

Leave a Reply

Leave a Reply

  Subscribe  
Notify of